ایک سے زائد بار سنگباری میں ملوث نوجوانوں کو بھی’عام معافی ‘زیر غور فی الوقت پہلی مرتبہ پتھراومیں ملوظ نوجوانوں کے معاملات کا جائز ہ لیاجارہاہے:وزیر اعلیٰ

الطاف حسین جنجوعہ
جموں//وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے پہلی بار سنگبارزی میں ملوث نوجوانوں کو ’عام معافی ‘دینے کے بعد ،اُن نوجوانوں کو کے لئے بھی عام معافی پر غور کیاجارہاہے جن کے خلاف پتھر بازی کے ایک سے زائد کیس درج ہیں۔انہوں نے کہاکہ ابھی فی الحال پہلی بار سنگبازی کے معاملات میں ملوث نوجوانوں کو ’ایمنسٹی ‘دی جارہی ہے ۔قانون ساز کونسل میں پی ڈی پی ممبر یاسر ریشی کے ایک ضمنی سوال کے جواب میں وزیر اعلیٰ نے کہاکہ سنگ باری میں ملوث زیادہ سے زیادہ تعداد نوجوانوں کی ہے، حکومت نے سوچا کہ انہیں ایک موقع دیاجانا چاہئے کہ وہ معمول کی زندگی جئیں ، اپنی پڑھائی کریں اور آگے روزگار حاصل کریں۔ انہوں نے کہا ”ابھی ہم پہلے پہلی مرتبہ سنگباری میں ملوث نوجوانوں کو عام معافی دیں گے، ہم دیکھ رہے ہیں کہ اس کا نتیجہ کیانکلتا ہے ، آگے ان کا رویہ کیسا رہتا ہے، اس عمل میں ان کے والدین کو بھی شامل کیاجارہاہے“یاسر ریشی نے پتھراؤ کی وارداتوں میں ملوث ایسے نوجوانوں کے بارے میں حکومت کی پالیسی کے بارے میں ضمنی سوال میںجاننے کی کوشش کی تھی جن کے خلاف سنگباری میں ایک سے زائد ایف آئی آر درج ہیں۔انہوں نے وزیر اعلیٰ سے حکومت سے پوچھاکہ آیا عام معافی کے زمرے میں ایسے نوجوانوں کا لانا بھی حکومت کے زیر غور ہے ۔اس دوران ایوان میں وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی بھی ایوان میں موجود تھیں جنہوں نے از خود اس ضمنی سوال کا جواب دیا۔ انہوں نے کہا”ہماری سرکار فی الوقت ایسے نوجوانوں کے معاملات کا جائزہ لے رہی ہے جو پہلی بار پتھراؤ میں ملوث ہوئے ہیںہم ان کے والدین اور افراد کنبہ کے ساتھ بات چیت کررہے ہیں تاکہ یہ ملزمان جو زیادہ تر نوجوان ہیں، مستقبل میں اس طرح کی سرگرمیوں کا ارتکاب نہ کریں“۔وزیر اعلیٰ نے ساتھ ہی یہ بھی کہا کہ حکومت دوسری بار سنگباری کرنے والے نوجوانوں کو بھی معافی دینے پر غور کررہی ہے۔