نیشنل کانفرنس و کانگریس نے جان بوجھ کر خطہ پیر پنجال کوگجر-پہاڑی کے نام پر تقسیم کیا:ظفر منہاس

اُڑان نیوز
مینڈھر (پونچھ)//اپنی پارٹی نے 23مئی کو مینڈھر قصبہ میں سینکڑوں لوگوں کی اپنی گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کے ساتھ راجوری – اننت ناگ پارلیمانی سیٹ کے پارٹی کے امیدوار ظفر اقبال منہاس کی حمایت میں ایک متاثر کن روڈ شو نکالا۔عظیم روڈ شو چلڈرن پارک سے شروع ہوا ۔مینڈھر کے بس اسٹینڈ پر اختتام پذیر ہوا جس میں سابق نائب وزیر اعلیٰ ڈاکٹر نرمل سنگھ، یودھویر سیٹھی، ممتاز احمد خان اور پارٹی رہنماؤںودیگر لیڈروں نے بھی شرکت کی۔ طاقت کے مظاہرے کے طور پر عوام کی ریلی مختلف سڑکوں اور چوکوں سے گزری جس میں پارٹی امیدوار ظفر اقبال منہاس کی حمایت کا اظہار کیا گیا۔پارٹی امیدوار ظفر اقبال منہاس نے پیر پنجال کے عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے جنہوں نے ان کے ساتھ محبت اور حمایت کا اظہار کیا، پیر پنجال کے عوام کو ان خرد برد سے خبردار کیا جو صدیوں سے اس خطے میں گجر اور پہاڑی قبائل کے بھائی چارے اور باہمی بقا ء کو خراب کرنے پر تلے ہوئے ہیں۔’’خطے کے یہ خوردبین لوگ معاشرے میں تفرقہ کے بیج بو کر غلط فہمی پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کیونکہ وہ جیو اور جینے دو پر یقین نہیں رکھتے۔ تاہم، ہم خطے میں گجر – پہاڑیوں کے باہمی احترام اور بھائی چارے کے دفاع کے لیے کسی بھی قیمت پر ان کا مقابلہ کریں گے۔انہوں نے یاد کیا کہ کس طرح نیشنل کانفرنس اور اس کی اتحادی کانگریس پارٹی نے جان بوجھ کر پیر پنجال خطے (پہاڑی علاقوں) کو تقسیم کیا اور اس خطے کو دو حصوں میں تقسیم کرکے لائن آف کنٹرول بنائی یعنی اس کا ایک حصہ اس وقت 1947 سے پاکستان کے قبضے میں ہے۔ان دونوں جماعتوں نے پہاڑی بولنے والے لوگوں کی حکمت عملی کے لحاظ سے اہم سرحدی پٹی کو دو حصوں میں تقسیم کرنے کے لیے ہاتھ ملایا، اپنی پارٹی کے امیدوار نے نیشنل کانفرنس اور اس کی اتحادی کانگریس پارٹی پر الزام لگاتے ہوئے کہا کہ دونوں بالترتیب مرکز اور جموں و کشمیر میں برسراقتدار ہیں۔انہوں نے کہا کہ وہ راجوری سے کرناہ تک پھیلے ہوئے پورے خطے کو ایک سرحدی علاقہ بنانے کے ذمہ دار ہیں جس نے مہاراجہ کی غیر منقسم ریاست کے لوگوں کے دونوں حصوں کے نہ ختم ہونے والے مصائب اور تکالیف کا دروازہ کھولا۔شناخت اور ریزرویشن کے لیے پہاڑی قبیلے (سب سے زیادہ پسماندہ اور نظر انداز قبائل میں سے ایک) کی 45 سال سے زیادہ کی جدوجہد کو یاد کرتے ہوئے؛ منہاس نے کہا کہ کچھ مفاد پرستوں نے پہاڑی تحریک کو کچلنے کی ایک سے زیادہ بار کوشش کی جو اب اپنی طویل جدوجہد کے بعد اپنے بڑے تنے کے ساتھ ایک مکمل طور پر بڑھے ہوئے درخت کی شکل اختیار کر چکی ہے۔انہوں نے کہا’’میں ان مفاد پرستوں کو خبردار کرتا ہوں کہ ہم آنے والی نسل کے ساتھ کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں ہونے دیں گے۔ گجر-پہاڑی کی اکثریت خطے میں صدیوں سے امن اور ایک دوسرے کے ساتھ بھائی چارے کے ساتھ رہتے ہیں۔ تاہم، ہم پہاڑی قبیلے کے لیے ریزرویشن کے خلاف چند لوگوں کے تباہ کن منصوبوں کی اجازت نہیں دیں گے، نہ ہی ہم انھیں اپنے صدیوں پرانے بھائی چارے کو نقصان پہنچانے دیں گے۔انہوں نے کہا کہ ’اربنائزڈ مائکروسکوپک اقلیت ‘اپنے ذاتی مفاد کے لیے گجروں-پہاڑیوں کے درمیان غلط فہمی پیدا کر رہی ہے، جو جموں کے شہری علاقوں اور خطے کے دیگر حصوں میں آباد ہیں۔’’وقت آنے پر ہم ان کو بے نقاب کریں گے اور ایسے عناصر کو خطے میں پرامن ماحول کو نقصان پہنچانے کی اجازت نہیں دیں گے‘‘۔ انہوں نے پھر خبردار کیا۔دریں اثنا، انہوں نے یقین دلایا کہ اگر وہ پارلیمنٹ میں منتخب ہوئے تو وہ خطے میں ترقی اور سیاحت کو نئے سرے سے ڈھالیں گے جس سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے اور مقامی معیشت کو فروغ ملے گا۔خطے میں بہت زیادہ صلاحیتیں ہیں جنہیں پائیدار ترقی اور روزگار کے نئے مواقع کی تلاش کے لیے تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے اپنے اس عزم کا بھی حوالہ دیا کہ وہ راجوری – پونچھ کے لیے علیحدہ پارلیمانی نشست حاصل کرنے کے لیے لڑنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے تاکہ عوام کو پارلیمنٹ میں ان کا اپنا نمائندہ مل سکے۔انہوں نے ہل ڈیولپمنٹ کونسل اور لداخ کی طرز پر فنڈز کی بھی حمایت کی۔ انہوں نے لوگوں کی توجہ ان خاندانوں کی حالت زار کی طرف بھی دلائی جن کے نوجوانوں کو مختلف الزامات کے تحت حراست میں لیا گیا ہے اور یقین دلایا کہ پارٹی انہیں حراست سے رہا کرانے کی کوشش کرے گی۔’’ہم حراست میں لیے گئے نوجوانوں کو معمول کی مرکزی دھارے کی زندگی میں واپس آنے کا موقع فراہم کرنا چاہتے ہیں‘‘۔انہوں نے تاریخی مغل روڈ یعنی ڈیرہ کی گلی اور پیر کی گلی پرتمام موسمی حالات میں ہائی وے کو فعال رکھنے کے لیے دو اہم سرنگوں کی تعمیر کے لیے منظوری حاصل کرنے کی یقین دہانی کو دہراتے ہوئے مزید کہا۔روڈ شو میں شرکت کرنے والوں میں رقیق احمد خان، واجد بشیر ٹکو، ذوالفقار ممتاز، آفتاب تبی، اعجاز خان، کفیل خان، نزاکت شاہ، طارق خان، شکیل خان، ریٹائرڈایس پی رزاق خان، عبدالغنی منہاس اور دیگرشامل ہیں۔