کانگریس کی وجہ سے جموں کشمیر کے لوگ دہائیوں تک دہشت گردی کے شکار رہے :وزیر اعظم

نیوزڈیسک
اوڑیسہ(کندھمال) //پی ایم مودی نے کہاکہ کانگریس کے اس کمزور رویے کی وجہ سے جموں و کشمیر کے لوگ 60 سال سے دہشت کے شکاررہے ہیں۔انہوں نے بتایاکہ ملک کو اتنے دہشت گرد حملوں کا سامنا کرنا پڑا ہے کہ اسے بھلایا نہیں جا سکتا۔ہشت گردوں کو سبق سکھانے کے بجائے یہ لوگ دہشت گردوں سے ملاقاتیں کرتے تھے۔ 26/11 کے ممبئی دہشت گردانہ حملے کے بعد ان میں دہشت گردی کے سرپرستوں کے خلاف کارروائی کرنے کی ہمت نہیں تھی۔وزیر اعظم نے بتایا کہ یہ این ڈی اے کی حکومت تھی جس نے پلوامہ حملے کے فورا بعد پاکستان کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے دہشت گردوں کو ہلاک کیا ۔ اوڈیشہ کے کندھمال میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کانگریس لیڈر منی شنکر ایر کے اس بیان پر جوابی حملہ کیا کہ ‘پاکستان کا احترام کیا جانا چاہئے کیونکہ اس کے پاس ایٹمی بم ہے’۔ ریلی سے خطاب کرتے ہوئے پی ایم مودی نے کہا کہ کانگریس بار بار اپنے ہی ملک کو ڈرانے کی کوشش کرتی ہے۔ وہ کہتا ہے ہوشیار رہو، پاکستان کے پاس ایٹم بم ہے۔ یہ مردہ لوگ ملک کا دماغ بھی مار رہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ  کانگریس کا ہمیشہ سے یہی رویہ رہا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آج پاکستان کی حالت یہ ہے کہ اب وہ بم بیچنے نکلے ہیں۔ خریدنے کے لیے کسی کو تلاش کررہا ہے لیکن، لوگ اپنے بم کے معیار سے بھی واقف ہیں اور وہ مواد بھی فروخت نہیں ہوتا۔پی ایم مودی نے مزید کہا کہ کانگریس کے اس کمزور رویے کی وجہ سے جموں و کشمیر کے لوگ 60 سال سے دہشت کا شکار ہیں۔ ملک کو اتنے دہشت گرد حملوں کا سامنا کرنا پڑا ہے کہ اسے بھلایا نہیں جا سکتا۔ دہشت گردوں کو سبق سکھانے کے بجائے یہ لوگ دہشت گردوں سے ملاقاتیں کرتے تھے۔ 26/11 کے ممبئی دہشت گردانہ حملے کے بعد ان میں دہشت گردی کے سرپرستوں کے خلاف کارروائی کرنے کی ہمت نہیں تھی، کیونکہ کانگریس ہندوستانی اتحاد کو لگتا تھا کہ اگر ہم نے کارروائی کی تو ہمارا ووٹ بینک ناراض ہو جائے گا۔انہوں نے مزید کہاکہ آج سے 26 سال پہلے اٹل بہاری واجپائی کی حکومت نے پوکھران میں جوہری تجربہ کیا تھا اور ہم نے دکھایا تھا کہ حب الوطنی سے لبریز حکومت ملک کے مفاد، ملک کی سلامتی، عوام کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرتی ہے۔ یہ کیسے کام کرتا ہے؟ مجھے یاد ہے کہ جب اٹل بہاری واجپائی کی حکومت نے پوکھران میں جوہری تجربہ کیا تھا تو پوری ہندوستانی برادری نے بے چینی محسوس کی تھی اور آزادی کے بعد پہلی بار یہ غیر ملکی سرزمین پر ہوا تھا۔ لوگوں کی طرف دیکھا جاتا ہے۔