سیاحت کی بڑھتی سرگرمیاں جموں و کشمیر میں تبدیلی کی زندہ مثال: ڈاکٹر جتیندر

نیوزڈیسک
نئی دہلی//یوٹی جموں وکشمیر میں پچھلے میں گذشتہ ایک سال کے دوران نے دو کروڑ سے زائد سیاحوں کی آمد ہوئی ۔سیاحت کی بڑھتی سرگرمیاں ‘جموں و کشمیر میں تبدیلی’ کی “زندہ مثال” ہے۔یہ بات مرکزی وزیر مملکت ڈاکٹر جتندر سنگھ نے پی ٹی آئی کو دیئے گئے خصوصی انٹرویو میں کہی۔ انہوںنے کہاکہ ایسا اس لیے ہوا ہے کہ دہشت گردی میں کمی آئی ہے۔ پہلے بڑھتی ہوئی دہشت گردی کی وجہ سے زیادہ سیاح کشمیر نہیں آتے تھے۔حزب اختلاف کے ان الزامات پر سوال کا جواب دیتے ہوئے کہ بی جے پی جموں و کشمیر میں انتخابات کے خلاف ہے، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا کہ وزیر داخلہ امت شاہ نے پارلیمنٹ میں کئی بار واضح کیا ہے کہ انتخابات مناسب وقت پر ہوں گے۔انتخابات پر سپریم کورٹ کے حکم کا حوالہ دیتے ہوئے، انہوں نے کہا، “اب سپریم کورٹ نے یہ بھی حکم دیا ہے کہ جموں و کشمیر میں انتخابات ستمبر تک کرائے جائیں اور وزیر داخلہ نے بھی یہ کہا ہے۔ اگر کانگریس اب بھی الزام لگا رہی ہے کہ بی جے پی الیکشن کروانا چاہتے ہیں، اب کس کی بات پر یقین کریں گے؟وزیر نے کہا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی انتخابات سے نہیں بھاگتی اور جب بھی الیکشن کمیشن فیصلہ کرے گا پارٹی انتخابات کے لیے تیار ہے۔راہل گاندھی کی ‘بھارت جوڑو نیا یاترا’ کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا کہ کانگریس لیڈر نے پہلے بھی جنوب سے شمال کا سفر کیا تھا، لیکن اس کا فائدہ سمجھ میں نہیں آ سکا۔”انہوں نے جنوب سے شمال تک یاترا نکالی تھی اور اگر وہ شروع کرنے سے پہلے اس کے اثرات کا جائزہ لیتے تو بہتر ہوتا۔ اب وہ مغرب سے مشرق کی طرف جا رہے ہوں گے۔ پتہ نہیں وہ کیا سوچیں گے۔ لیکن اب وہ سمجھتے ہیں کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے کام کرنے کے انداز کو اپنا کر وہ کچھ ساکھ کمائیں گے، تو اس کا کریڈٹ بی جے پی کو دینا چاہیے۔یہ پوچھے جانے پر کہ کیا 2024 کے انتخابات میں بی جے پی کے لیے سب سے بڑا چیلنج کانگریس یا علاقائی پارٹیاں ہیں، مرکزی وزیر ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا، ’’مجھے نہیں لگتا کہ اس وقت کوئی بھی پارٹی بی جے پی کو سنگین چیلنج دینے کی پوزیشن میں ہے۔ ” لیکن بھارتیہ جنتا پارٹی ہر الیکشن کو سنجیدگی سے لیتی ہے۔وزیر نے زور دے کر کہا کہ آئندہ لوک سبھا انتخابات میں کوئی بھی پارٹی بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیے چیلنج نہیں ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ جموں و کشمیر میں سابقہ حکومتوں نے اپنی خوشامد کی سیاست کی وجہ سے خطے کے لوگوں کو ترقی سے محروم رکھا۔