راجوری پونچھ اضلاع میں میں تقریباً 30 پاکستانی جنگجوؤں سرگرم ہونے کا شبہ

ہندوستانی فوج پر دباؤ ڈالنے کیلئے ایک بڑے گیم پلان کا حصہ:دفاعی ذرائع
نیوزڈیسک
جموں//پاکستان جموں و کشمیر کے راجوری پونچھ سیکٹر میں دہشت گردی کو بحال کرنے کی کوشش کر رہا ہے کیونکہ اس علاقے کے جنگلاتی علاقوں میں 25سے30پاکستانی دہشت گردوں کے چھپے ہونے کا شبہ ہے۔ذرائع نے بتایا کہ علاقے میں دہشت گردانہ سرگرمیوں کو بحال کرنے کا منصوبہ پاکستان اور چین کی جانب سے لداخ سیکٹر سے فوجیوں کو ہٹانے اور اس علاقے میں افواج کو دوبارہ تعینات کرنے کے لیے ہندوستانی فوج پر دباؤ ڈالنے کے لیے ایک بڑے گیم پلان کا حصہ ہے۔پاکستان اور چین کے گٹھ جوڑ کا ایک بڑا گیم پلان ہے کہ ہندوستان کو جموں اور کشمیر کے سیکٹر سے باہر نکلنے کی اجازت نہ دی جائے اور چین کی سرحد پر فوجیوں کو تعینات کیا جائے، خاص طور پر لداخ سیکٹر میں، جہاں پی ایل اے اور ہندوستانی افواج ایک دوسرے کے ساتھ لڑائی میں مصروف ہیں۔ اب پچھلے تین سالوں سے تعطل، “انہوں نے کہا۔ایک معروف انگریزی خبر رسا ایجنسی نے ایک رپورٹ میں جمعہ کے روز کیا ہے کہ ہندوستان نے 2020میں چین کی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لیے پونچھ سیکٹر سے راشٹریہ رائفلز کی یکساں فورس کو لداخ منتقل کیا تاکہ دوبارہ توازن قائم کیا جاسکے اور PLA پر ہندوستانی طاقت کا مقابلہ کرنے کے لیے دباؤ ڈالا جا سکے۔ذرائع نے بتایا کہ تقریباً 25سے30 پاکستانی دہشت گرد پونچھ راجوری سیکٹر کے اوپری علاقوں میں ایک جنگلاتی علاقہ میں چھپے ہوئے ہیں تاکہ سیکورٹی فورسز پر حملہ کریں۔گزشتہ برسوں کے دوران جب سے یونیفارم فورس لداخ کی کارروائیوں کے لیے روانہ ہوئی ہے، پاکستان نے اپنے ہی دہشت گردوں کو پاکستان سے اس علاقے میں بھیجنا شروع کر دیا ہے تاکہ ہندوستانی فوجیوں کے خلاف حملے کیے جائیں تاکہ ہندوستان کو علاقے میں اپنی فوجیں دوبارہ تعینات کرنے پر مجبور کیا جا سکے۔ہندوستانی فوج نے حال ہی میں دہشت گردی کی کارروائیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے ایک اور بریگیڈ میں منتقل کیا تھا اور اس علاقے میں کامیابی حاصل کی ہے۔اس سے قبل جمعرات کی شام کو راجوری ضلع کے ڈیرہ کی گلی کے جنگلاتی علاقے میں فوج کی دو گاڑیوں پر بھاری ہتھیاروں سے لیس دہشت گردوں کی طرف سے گھات لگا کر حملہ کرنے کے بعد چار فوجی اہلکار ہلاک جبکہ تین دیگر زخمی ہو گئے۔دہشت گردوں نے تھانہ منڈی، راجوری میں فوج کی دو گاڑیوں پر گھات لگا کر حملہ کیا۔