راجوری اور پونچھ میں بڑے پیمانے پر تلاشی آپریشن جاری، تین مشتبہ افراد گرفتار

جموں//جموں وکشمیر کے راجوری اور پونچھ اضلاع کے سرحدی علاقوں میں سیکورٹی فورسز نے بڑے پیمانے پر تلاشی آپریشن شروع کیا ہے۔معلوم ہوا ہے کہ سیکورٹی فورسز نے ملی ٹینٹ مخالف آپریشن کے دوران تین مشتبہ افراد کو دھر دبوچ کر سلاخوں کے پیچھے دھکیل دیا۔بتادیں کہ پولیس سربراہ آر آر سوئن نے سرگرم ملی ٹینٹوں اور ان کے اعانت کاروں کے خلاف بڑے پیمانے پر کریک ڈاون شروع کرنے کے احکامات صادر کئے ہیں۔اطلاعات کے مطابق سیکورٹی فورسز نے پیر کی صبح پونچھ اور راجوری کے سرحدی علاقوں کو محاصرے میں لے کر سرچ آپریشن لانچ کیا۔ذرائع نے بتایا کہ فوج ، سی آر پی ایف اور جموں وکشمیر پولیس نے راجوری کے بدھل ، تھانہ منڈی ، سندر بنی اور کالاکوٹ علاقوں کو محاصرے میں لے کر لوگوں کے چلنے پھرنے پر پابندی عائد کی۔ذرائع نے بتایا کہ پونچھ اور راجوری کے سرحدی علاقوں میں مشکوک افراد کی نقل وحمل کی اطلاع ملنے کے بعد سیکورٹی فورسز نے ملی ٹینٹ مخالف آپریشن شروع کیا ہے۔معلوم ہوا ہے کہ اتوار کی شام کو سیکورٹی فورسز نے بروٹ بدھل علاقے میں تین مشتبہ افراد کی گرفتاری عمل میں لائی۔انہوں نے بتایا کہ سیکورٹی فورسز نے ایک وسیع العریض رہائشی اور جنگلی علاقوں کو سیل کرکے فرار ہونے کے سبھی راستوں پر پہرے بٹھا دئے ہیں۔دفاعی ذرائع نے راجوری اور پونچھ کے متعدد علاقوں میں تلاشی آپریشن شروع کرنے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ سندربنی کے مراد پورہ ، باتھنوئی، گھائی بھوال ، کالاکوٹ کے تتہ پانی بروہ ، منجا کوٹ کے گھامبر اور مغلان گاوں کو فوج اور پولیس نے مشترکہ طور پرمحاصرے میں لے لیا ہے۔ان کے مطابق پونچھ کے گورسی ، جبارن والی گلی ، سروتی اور آری علاقے جو کہ ایل او سی کے نزدیک واقع ہے کو بھی محاصرے میں لے کر تلاشی آپریشن شروع کیا گیا ہے۔دفاعی ذرائع نے مزید بتایا کہ جنگلی علاقوں میں مشتبہ ملی ٹینٹوں کی موجودگی کی اطلاع موصول ہونے کے بعد سیکورٹی فورسز نے کارڈن اینڈ سرچ آپریشن لانچ کیا ہے۔انہوں نے کہاکہ راجوری اور پونچھ اضلاع میں پچھلے چند ماہ کے دوران ملی ٹینسی کے واقعات میں غیر معمولی اضافہ دیکھنے کو ملا ہے جس کے پیش نظر ان علاقوں میں سرگرم ملی ٹینٹوں اور ان کے مدد گاروں کی بڑے پیمانے پر تلاش شروع کی گئی ہے۔انہوں نے بتایا کہ رہائشی مکانوں کی تلاشی کے دوران مکینوں کے شناختی کارڈ بھی باریک بینی سے چیک کئے جارہے ہیں۔باوثوق ذرائع کا کہنا ہے کہ پونچھ اور راجوری کے سرحدی علاقوں میں سرگرم ملی ٹینٹوں کے خلاف سیکورٹی ایجنسیوں نے بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کیا ہے۔واضح رہے کہ 22نومبر کو راجوری کے جنگلی علاقے میں سیکورٹی فورسز اور ملی ٹینٹوں کے مابین تصادم میں دو کیپٹن سمیت پانچ جوان جاں بحق ہوئے تھے جبکہ 36گھنٹوں تک جاری رہنے والی اس خونین جھڑپ میں لشکر کمانڈر سمیت دو پاکستانی ملی ٹینٹ بھی مارے گئے تھے۔