رتنو چک میں جموںوکشمیراپنی پارٹی کایک روزہ کنونشن بھاجپا نے ہماری جمہوری آزادی چھین لی ہے:الطاف بخاری

26/11 کے متاثرین کو خراج تحسین پیش ،ممتاز تاجر وشال نارانیہ اپنے حامیوں کے ساتھ اپنی پارٹی میں شامل
اُڑان نیوز

جموں //اپنی پارٹی کے صدر سید محمد الطاف بخاری نے اتوار کے روز کہا ہے کہ جموں و کشمیر میں امپورٹڈ(درآمد شدہ )حکومت جموں کے لوگوں کے لئے بدحالی کا باعث بنا ہے جس نے ترقی نہیں کی ہے اور بیرونی لوگوں کے ذریعہ وسائل پر قبضہ کیا ہے۔رتنو چک جموںمیں منعقدہ ایک روزہ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے الطاف بخاری نے کہا کہ ’’جموں موجودہ حکومت اور خاص طور پر بی جے پی سے سخت مایوس ہے کیونکہ وہ جموں و کشمیر سے خصوصی حیثیت کے خاتمے سے پہلے جو وعدہ کیا تھا اسے پورا کرنے میں ناکام رہی ہے‘‘۔ احترام کے نشان کے طور پر، بخاری نے اتحاد اور لچک پر زور دیتے ہوئے کنونشن کے دوران 26/11 کے متاثرین کو دِلی خراج عقیدت پیش کیا۔اپنی پارٹی کے ایک روزہ کنونشن کے دوران، الطاف بخاری نے ممتاز کاروباری شخصیت وشال نارانیہ اور ان کے حامیوں کو پارٹی میں خوش آمدید کہا۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ ان کی شمولیت سے جموں میں پارٹی مضبوط ہوگی۔’’بی جے پی نے دفعہ370 اور 35A کو وسیع ترقی، روزگار کی راہ میں رکاوٹ قرار دیا تھا۔ اس نے لوگوں کو یہ بھی یقین دلایا تھا کہ خصوصی درجہ کی منسوخی کے بعد جموں و کشمیر میں وسیع تر صنعتی ترقی کے لیے سرمایہ کاری کی جائے گی تاکہ روزگار کے مواقع پیدا ہوں۔ تاہم، آج تک ایسا کچھ نہیں ہوا ہے،‘‘ انہوں نے لوگوں میں کم ترقی اور مایوسی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا، خاص طور پر اس وجہ سے کہ باہر کے لوگوں نے جموں میں وسائل اور تجارت پر قبضہ کر لیا ہے۔انہوں نے کہا کہ مقامی آبادی اپنے آپ کو دھوکہ دہی کاشکارمحسوس کرتی ہے کیونکہ شراب، اور ٹھیکیدار مافیا حکومتی اہلکاروں کے تعاون سے سرگرم عمل ہے۔’’ان اہلکاروں کو جموں و کشمیر میں بھی ’امپورٹ ‘کیا گیا ہے حالانکہ وہ زمینی حقیقت کو نہیں جانتے ہیں، اور ان سرکاری افسران کا مقامی آبادی سے بھی کوئی تعلق نہیں ہے اور وہ اپنے ان اقدامات یعنی تجاوزات کے خلاف مہم ، شراب کی دکانوں میں تیزی، قدرتی وسائل کا استحصال، نجی ملازمتوں اور کاروباری شعبے پر قبضہ کے لیے بدنام ہو چکے ہیں جو مکمل طور پر عوام دشمن ہیں،‘‘ انہوں نے کہا۔انہوں نے مزید کہا کہ ’’ماضی میں جموں و کشمیر میں ایسی صورتحال کبھی نہیں دیکھی گئی جہاں مقامی آبادی کو مکمل طور پر نظرانداز کیا گیا ہو اور سرکاری اور نجی شعبے میں باہر کے لوگوں کی حوصلہ افزائی کی گئی ہو۔‘‘انہوں نے کہا کہ مختلف سرکاری ملازمتوں کے خواہشمند اب بھی مختلف آسامیوں پر بھرتی کے عمل میں گھپلوں کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں، لیکن ان کے مطالبات پر توجہ نہیں دی گئی۔’’سرکاری افسران کا کوئی احتساب نہیں ہے۔ یہ اس لیے ہو رہا ہے کیونکہ جموں و کشمیر میں کوئی منتخب حکومت نہیں ہے اور بغیر کسی وجہ کے جموں و کشمیر میں اسمبلی انتخابات کا اعلان نہیں کیا جا رہا ہے جو کہ بہت بدقسمتی کی بات ہے اور اس نے اپنی حکومت کو منتخب کرنے کا عوام کا جمہوری حق چھین لیا ہے‘‘۔انہوں نے مزیدکہا کہ جموں و کشمیر کو ریاست کا درجہ بحال کیا جانا چاہئے اور اسمبلی انتخابات بلاتاخیر کرائے جانے چاہئیں کیونکہ لوگوں میں حکومت کے خلاف غصہ پھیل رہا ہے جسے جمہوری نظام کی بحالی کے ذریعے دور کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے جموں کشمیر ایڈمنسٹریٹو سروس (جے کے اے ایس) اور جموں کشمیر پولیس سروس (جے کے پی ایس) کے افسران کو دور کر دیا ہے جو مقامی مسائل کو واضح کر سکتے ہیں اور انہیں مناسب طریقے سے حل کر سکتے ہیں۔’’بدقسمتی سے حکومت نے انتظامیہ اور پولیس میں افسران کو باہر سے امپورٹ کیا ہے اور انہیں عوامی مسائل کے حل میں کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ انتظامیہ میں مقامی افسران کی غیر موجودگی میں، کوئی بھی سرکاری ہسپتالوں، تعلیمی اداروں، سڑکوں کے بنیادی ڈھانچے وغیرہ کی بگڑتی ہوئی حالت دیکھ سکتا ہے۔‘‘انہوں نے کہا کہ اگر اپنی پارٹی اقتدار میں آتی ہے تو ان کی پارٹی 6000 ڈاکٹروں کی بھرتی کرے گی، سرکاری اسکولوں اور کالجوں میں اساتذہ، لیکچراروں اور پروفیسروں کی خالی آسامیوں کو پر کرے گی۔ ہم ایک مقررہ مدت میں ضروری انفراسٹرکچر فراہم کریں گے۔ جموں و کشمیر میں اساتذہ کی تقریباً 22000 آسامیاں خالی ہیں۔’’اگر ہم اگلی حکومت بناتے ہیں تو احتساب ہوگا اور عوامی مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے گا،‘‘ انہوں نے جموں میں پسماندگی کو ختم کرنے اور روزگار کے مسائل کو حل کرنے میں ناکام حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ ایمس جموں (وجئے پور) کے ڈاکٹروں اور پیرا میڈیکل اسٹاف کو باہر سے نہیں بلکہ جموں سے بھرتی کیا جائے گا۔دریں اثنا، انہوں نے راجوری پونچھ میں ابھرتی ہوئی سیکورٹی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا جہاں دہشت گردی سے متعلق واقعات رونما ہوئے ہیں۔تاہم انہوں نے بین الاقوامی سرحد اور لائن آف کنٹرول کے ساتھ رہنے والی مقامی آبادی کو بہادری سے دشمنوں کا سامنا کرنے اور ملک کی داخلی سلامتی کے تحفظ میں دفاعی افواج کی مدد کرنے پر سراہا۔اس کے علاوہ انہوں نے لوگوں سے یہ بھی کہا کہ وہ جموں میں اپنی انتخابی مہمات کے لیے حکام کی فکر نہ کریں۔’’تم سے ایک انچ زمین بھی نہیں چھینی جائے گی۔ ہم ایسی انسداد تجاوزات مہم کی اجازت نہیں دیں گے جن کا مقصد لوگوں کو ان کی زمین سے بے گھر کرنا ہو،‘‘ انہوں نے اپنی پارٹی کی طرف سے حمایت کا یقین دلاتے ہوئے کہا۔انہوں نے کہا کہ پارٹی اقتدار میں آنے پر زمین کو ریگولرائز کرے گی۔اس کے علاوہ، اپنی پارٹی کے سینئر نائب صدر، غلام حسن میر نے کہا کہ جموں و کشمیر کے دونوں خطوں کے عوام ریاست کی بحالی اور اسمبلی انتخابات کے انعقاد کا مطالبہ کرتے ہیں۔حکام سے مائننگ مافیا کے خلاف کارروائی پر سوال اٹھاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جموں میں صورتحال بدل گئی ہے کیونکہ لوگوں کو تعمیراتی سامان مہنگے داموں پر مل رہا ہے اور بجلی کے نرخوں میں بھی کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔’’جموں میں بجلی کے استعمال کے چارجز ادا کرنے کے بعد بھی سردیوں میں بجلی کی کٹوتی ہو رہی ہے، لیکن JPDCL سمارٹ میٹر لگانے کے باوجود 24×7بجلی کو یقینی بنانے میں ناکام رہا ہے۔ کشمیر میں بجلی کی غیر معمولی کٹوتیوں کے ساتھ بجلی کی فراہمی کے حوالے سے صورتحال اور بھی خراب ہے۔انہوں نے جموں و کشمیر کے لوگوں کو خطے، مذہب اور طبقاتی جدوجہد کے نام پر تقسیم کرنے کے لیے روایتی سیاسی جماعتوں کو تنقید کا نشانہ بنایا۔انہوں نے کہا، ’’اپنی پارٹی ذات پات، نسل، علاقہ یا مذہب سے قطع نظر تمام خطوں کے اتحاد، مساوات اور مساوی ترقی کو فروغ دینے کے لیے پرعزم ہے۔‘‘انہوں نے عوام سے پارٹی کو مضبوط کرنے کی اپیل کی۔ جموں کے ساتھ ساتھ کشمیر بھی کسی منتخب حکومت کی وجہ سے یکساں طور پر مشکلات کا شکار ہیں۔ جموں کے لوگوں نے 2014 کے اسمبلی انتخابات میں بی جے پی کو ووٹ دیا تھا، لیکن وہ ضروری کام کرنے میں ناکام رہے۔ لہٰذا، لوگ ایسی حالت میں اترے جہاں ان کے مصائب میں اضافہ ہوا ہے،‘‘ انہوں نے مزید کہا۔ انہوں نے مزید کہا کہ جموں و کشمیر میں ترقی اور روزگار کے تمام مسائل کو حل کرنے کے لیے اسمبلی انتخابات کا انعقاد ضروری ہے۔اس دوران، اپنی پارٹی کے نائب صدر، چودھری ذوالفقار علی نے یاد کیا کہ اپنی پارٹی کی بنیاد کن حالات میں رکھی گئی تھی جب 5 اگست 2019 کے بعد لوگوں میں مکمل غیر یقینی اور نا امیدی تھی۔خصوصی حیثیت کے خاتمے سے پہلے لوگوں کو ترقی اور روزگار کی یقین دہانی کرائی گئی تھی۔ جب کہ ہماری پڑوسی ریاستوں میں اپنی حکومت کو منتخب کرنے کے لیے انتخابات ہو رہے ہیں، جموں و کشمیر میں بغیر وجہ بتائے پانچ سال بعد بھی انتخابات سے انکار کیا جا رہا ہے۔چونکہ حکومت بابو چلاتے ہیں، انہوں نے کہا کہ ان کا عوام سے تعلق ختم ہو گیا ہے اور اس صورتحال نے حکومت اور عوام کے درمیان خلیج کو بڑھا دیا ہے۔انہوں نے جموں و کشمیر میں پنچایتی راج اور شہری بلدیاتی انتخابات کے انعقاد میں تاخیر پر بھی سوالات اٹھائے۔پی آرآئیز،یوایل بیزکی مدت کے اختتام کے ساتھ، انہوں نے کہا کہ حکومتی اہلکار من مانے طریقے سے کام کریں گے جس سے عوام میں عدم اعتماد میں مزید اضافہ ہوگا۔انہوں نے کہا کہ باہر کے لوگوں نے مقامی کاروبار اور روزگار ہتھیا لیا ہے۔ ’’مہاراجہ ہری سنگھ نے ہماری شناخت کی حفاظت کی تھی۔ لیکن خصوصی درجہ کی منسوخی کے بعد، جموں کے ڈوگرہ سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں،‘‘۔انہوں نے بی جے پی پر سوال کرتے ہوئے کہا کہ اس نے جھوٹے اور کھوکھلے نعروں سے لوگوں کو گمراہ کیا۔تاہم انہوں نے کہا کہ عوام نے اپنی پارٹی اور اس کے صدر سید محمد الطاف بخاری صاحب سے امیدیں وابستہ کر رکھی ہیں تاکہ انہیں اس صورتحال سے نکالا جا سکے۔قبل ازیں اپنی پارٹی کے صوبائی صدر جموں منجیت سنگھ نے جموں، سانبہ، کٹھوعہ اور ادھم پور کے لوگوں کو بالخصوص صنعتی شعبے میں درپیش مشکلات پر روشنی ڈالی۔’’مقرر کردہ اصولوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے باہر کے لوگوں کو ہنر مند اور غیر ہنر مند ملازمتوں پر لگایا جا رہا ہے۔ مقامی نوجوانوں کو روزگار سے محروم کر دیا گیا ہے اور اس نے بے روزگاری کو جنم دیا ہے،‘‘ انہوں نے کہا۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ عوام نے اپنی پارٹی کے مساوی ترقی، امن، خوشحالی اور روزگار کے ایجنڈے پر اعتماد کا اظہار کیا ہے اور میدانی علاقوں سے بڑی تعداد میں پارٹی میں شمولیت اختیار کی ہے۔اس موقع پر موجود لوگوں میں فقیر ناتھ، پریم لال، محمد شفیع شیخ، ارون کمار چھبر، رمن تھاپا، نرمل کوتوال، ڈاکٹر روہت گپتا، ہنس راج ڈوگرا، بودھ راج بھگت، بھگت رام، اعجاز کاظمی، رقیق احمد خان، ابھے بکایا، ایڈوکیٹ لولی منگول، وپل بالی، پاونیت کور، راج کمار شرما، وکرم راٹھور، کلدیپ سوڈن، سرپنچ مکھن لال، سرپنچ جوگندر، پنچ سرجیت، راج شرما، انیرودھ کھجوریا، ایڈو کیٹ ساحل بھارتی، پرینکا منگوترا، بابو رام بھگت، منظور حسین، چودھری بچن، منگت رام، سندیپ وئید، جیوتی، شیتل شرما، نیلم گپتا، روپالی رانی، وکی سوڈن، شویتا دیوی اور دیگرشامل ہیں۔