بحر ہند میں درپیش چیلنجوں کو حل کرنے کیلئے تعاون کا فریم ورک ضروری: راجناتھ سنگھ

نئی دہلی؍؍ وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے بحر ہند کے خطے میں ماحولیاتی تبدیلی، بحری قزاقی، دہشت گردی، منشیات کی اسمگلنگ، حد سے زیادہ ماہی گیری اور کھلے سمندروں پر تجارت کی آزادی جیسے مشترکہ سمندری چیلنجوں سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے بین الاقوامی تعاون کے فریم ورک کے قیام پر زور دیا ہے۔وزیر دفاع نے پیر کو گوا میری ٹائم کانفرنس کے چوتھے ایڈیشن سے خطاب کرتے ہوئے خطے کو غیر محفوظ بنانے والے خود غرض مفادات سے گریز کرتے ہوئے مشترکہ سمندری ترجیحات کو حل کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے بین الاقوامی سمندری قوانین کے احترام کی اہمیت پر بھی زور دیا۔وزیردفاع نے کہا کہ “آزاد، کھلا اور قواعد و ضوابط پر مبنی میری ٹائم آرڈر ہم سب کی ترجیح ہے۔” اس طرح کے سمندری نظام میں ‘شاید صحیح ہے’ کی کوئی جگہ نہیں ہے۔ بین الاقوامی قوانین اور معاہدوں کی پاسداری ہمارا آئیڈیل ہونا چاہیے۔ ہماری تنگ نظری اور فوری مفادات ہمیں اچھی طرح سے قائم بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی یا نظرانداز کرنے کا باعث بن سکتے ہیں، لیکن ایسا کرنے سے ہمارے مہذب سمندری تعلقات ٹوٹ جائیں گے۔ ہماری مشترکہ سلامتی اور خوشحالی ہم سب کے تعاون کے ساتھ سمندر کے قانونی اصولوں کی پابندی کے عزم کے بغیر محفوظ نہیں رہ سکتی۔ انہوں نے کہا کہ تعاون کو فروغ دینے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے منصفانہ اصول اہم ہیں کہ کوئی ایک ملک دوسرے پر تسلط پسندانہ انداز میں غلبہ نہ پائے۔ماحولیاتی تبدیلی کے حوالے سے وزیر دفاع نے کہا کہ ممالک کو کاربن کے اخراج کو کم کرنے اور باہمی تعاون کی بنیاد پر ایک فریم ورک میں پائیدار طریقوں میں تبدیلی کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ اگر تمام ممالک گرین اکانومی میں سرمایہ کاری کر کے کاربن کے اخراج کو کم کرنے کی ذمہ داری قبول کریں اور ضرورت مند ممالک کے ساتھ ٹیکنالوجی اور سرمایہ کا اشتراک کریں تو دنیا اس مسئلے پر قابو پا سکتی ہے۔مسٹر سنگھ نے غیر قانونی اور غیر منظم ماہی گیری کو ایک چیلنج قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ وسائل کا حد سے زیادہ استحصال ہے۔ “زیادہ ماہی گیری سے سمندری ماحولیاتی نظام اور پائیدار ماہی گیری کو خطرہ لاحق ہے “۔ اس سے ہماری اقتصادی سلامتی اور علاقائی اور عالمی غذائی تحفظ کو بھی خطرہ ہے۔ وقت کی ضرورت مانیٹرنگ ڈیٹا کو مرتب کرنے اور شیئر کرنے کے لیے ایک کثیر القومی اشتراکی کوشش ہے۔ اس سے ایسے لوگوں کی شناخت کرنے میں مدد ملے گی جو بے قاعدہ یا دھمکی آمیز رویہ رکھتے ہیں، جن کا سختی سے مقابلہ کرنے کی ضرورت ہوگی۔تعاون پر مبنی فریم ورک کے قیام کے حوالے سے وزیر دفاع نے ممالک کے درمیان وسائل اور مہارت کے اشتراک پر زور دیا۔ انہوں نے تمام ممالک کے روشن خیال مفادات پر مبنی تنگ قومی مفادات اور باہمی فائدے کے درمیان فرق پر بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا “اچھے نتائج کے لیے قوموں کے درمیان تعاون اور اعتماد ضروری ہے لیکن ایک دشمن دنیا میں فائدہ اٹھانے یا اکیلے کام کرنے کا خوف سب سے بہتر فیصلوں کا باعث بن سکتا ہے۔ چیلنج کا ایسے حل تلاش کرنا ہے جو تعاون کو فروغ دیتے ہیں، اعتماد پیدا کرتے ہیں اور خطرات کو کم کرتے ہیں۔ ہم بات چیت کے ذریعے اعتماد پیدا کرتے ہیں جیسے کہ GMC، مشترکہ مشقیں، صنعتی تعاون، وسائل کا اشتراک، بین الاقوامی قانون کا احترام کرنا وغیرہ۔ ساجھیدار ممالک کے درمیان اعتماد مشترکہ سمندری ترجیحات کے حوالے سے بہترین نتائج برآمد کرے گا۔وزیر مملکت برائے امور خارجہ میناکشی لیکھی نے خطے میں امن اور خوشحالی کو یقینی بنانے کے لیے بحر ہند کے ممالک کے درمیان تعاون کی وکالت کی۔ بحر ہند کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے انہوں نے ملک کے سمندری مفادات کے تحفظ اور بحران کے وقت خطے میں سب سے پہلے کام کرنے کے لیے ہندوستانی بحریہ کی تعریف کی۔بحریہ کے سربراہ ایڈمرل آر ہری کمار نے روایتی اور غیر روایتی اور سمندر سے پیدا ہونے والے خطرات کی بدلتی ہوئی نوعیت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ کانفرنس ایسے خطرات کے خلاف موثر تخفیف کی حکمت عملی تیار کرنے کا ایک قیمتی موقع فراہم کرتی ہے۔ اس طرح بحر ہند میں امن کو برقرار رکھنے کے ساتھ ساتھ ترقی کو محفوظ بنایا جا سکتا ہے۔وزیر دفاع نے ‘میک ان انڈیا’ اسٹالز کا دورہ کیا تاکہ کانفرنس میں شرکت کرنے والے معززین کو ہندوستان کی دفاعی صنعت کی مقامی مینوفیکچرنگ میں بڑھتی ہوئی صلاحیتوں کی جھلک مل سکے۔کانفرنس کے چوتھے ایڈیشن کا تھیم ‘بحیرہ ہند کے خطے میں میری ٹائم سیکیورٹی: مشترکہ میری ٹائم ترجیحات کو ایک کوآپریٹو فریم ورک میں ترجمہ کرنا’ ہے۔ کانفرنس کے دوران نیول وار کالج، گوا کے زیراہتمام کئی سیشنز کا انعقاد کیا جا رہا ہے۔اتوار کو شروع ہونے والی سہ روزہ کانفرنس میں کوموروس کے نمائندہ انچارج دفاع محمد علی یوسفہ اور بنگلہ دیش، انڈونیشیا، مڈغاسکر، ملیشیا، مالدیپ، ماریشس، میانمار سیشلز، سنگاپور، سری لنکا اور تھائی لینڈ کی بحری افواج کے سربراہان یا سینئر افسران شرکت کر رہے ہیں۔یو این آئی