ہر ریاست، ہر ضلع اور ہر گاؤں ترقی یافتہ ہو گاتو……ترقی یافتہ ہندوستان خواب پورا ہوگا

ملک کے ایمس کی تعداد بڑھائی جارہی ہے:وزیر اعظم مودی
نیوز ڈیسک

حیدرآباد /جگدل پور، (چھتیس گڑھ )//وزیر اعظم نریندر مودی نے آج چھتیس گڑھ کے جگدل پور اور بستر میں 27ہزار کروڑ روپے کی لاگت کے متعدد ترقیاتی پروجیکٹوں کا سنگ بنیاد رکھا اور قوم کے نام وقف کیا۔ ان پروجیکٹوں میں بستر ضلع میں 23800 کروڑ روپے سے زیادہ کے ناگر نار میں این ایم ڈی سی اسٹیل لمیٹڈ کا اسٹیل پلانٹ کے ساتھ متعدد ریلوے اور سڑک پروجیکٹ شامل ہیں۔ انہوں نے تروکی – رائے پور ڈی ای ایم یو ٹرین سروس کو بھی ہری جھنڈی دکھا کر روانہ کیا۔یہاں ایک عوامی جلسے کو خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ترقی یافتہ ہندوستان کا خواب اسی وقت پورا ہوگا جب ملک کی ہر ریاست ، ہر ضلع اور ہر گاؤں ترقی یافتہ بن جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ آج کے تقریباً 27 ہزار کروڑ روپے کی لاگت والے پروجیکٹ ان عزائم کو پورا کرنے کے لئے شروع کئے گئے ہیں اور انہوں نے ترقیاتی پروجیکٹوں کے لئے چھتیس گڑھ کے عوام کو مبارکباد دی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ترقی یافتہ ہندوستان کے لئے ٹھوس سماجی اور ڈیجیٹل بنیادی ڈھانچہ مستقبل کی ضروریات کے مطابق ہونا چاہئے۔ انہوں نے بتایا کہ اس سال بنیادی ڈھانچے کے لئے 10 لاکھ کروڑ روپے مختص کئے گئے ہیں یعنی 6 گنا اضافہ کیا گیا ہے۔ریل ، سڑک ، ہوائی اڈہ ، بجلی کے پروجیکٹوں ، ٹرانسپوٹیشن ، غریبوں کے لئے مکان ، تعلیم اور حفظان صحت کے اداروں میں اسٹیل کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت نے پچھلے 9 برسوں میں ملک کو اسٹیل کی پیداوار میں خود کفیل بنانے کے لئے کئی اقدامات کئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ’’چھتیس گڑھ اسٹیل تیار کرنے والی بڑی ریاست ہونے کے بھرپور فوائد حاصل کررہی ہے‘‘۔ وزیر اعظم نے آج ناگر نار میں انتہائی جدیدترین اسٹیل پلانٹ کا افتتاح کرتے ہوئے اس بات کو اجاگر کیا۔انہوں نے کہا کہ اس پلانٹ میں پیدا ہونے والی اسٹیل ملک میں آٹو موبائل ، انجینئرنگ اور دفاعی مینوفیکچرنگ کے سیکٹر کو نئی توانائی دے گا۔ مودی نے کہا کہ ’’بستر میں پیدا ہونے والی اسٹیل دفاعی برآمدات میں اضافہ کرنے کے ساتھ مسلح افواج کو بھی مستحکم کرے گی۔‘‘ انہوں نے بتایا کہ اسٹیل پلانٹ بستر اور آس پاس کے علاقوں کے تقریباً 50ہزار نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کریگا۔انہوں نے مزید کہا کہ’’نیا اسٹیل پلانٹ مرکزی حکومت کے ذریعہ بستر جیسے امنگوں والے اضلاع کی ترقی کی ترجیح میں نئی رفتار پیدا کریگا۔‘‘کنیکٹوٹی پر مرکزی حکومت کی مخصوص توجہ کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر اعظم نے چھتیس گڑھ میں اقتصادی راہ داری اور جدید شاہراہوں کا ذکر کرتے ہوئے بتایا کہ سال 2014 کے مقابلے چھتیس گڑھ کے ریلوے کے بجٹ میں تقریباً 20 گنا اضافہ کیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ تروکی آزادی کے اتنے سال بعد ایک نئی ریلوے لائین کا تحفہ حاصل کررہی ہے۔ ایک نئی ڈی ای ایم یو ٹرین نے ملک کے ریلوے کے نقشے پر تروکی کو جوڑا ہے جو راجدھانی رائے پور کے لئے سفر کو مزید آسان بنائے گی۔جگدل پور اور دانتے واڑہ کے درمیان ریلوے لائن کو چوڑا کرنے کا پروجیکٹ لاجسٹکس کی لاگت میں کمی کریگا اور سفر میں آسانی پیدا کریگا۔وزیر اعظم نے اس بات پر خوشی کا اظہار کیا کہ چھتیس گڑھ نے ریلوے پٹریوں کی سو فیصد برق کاری کا کام پورا کرلیا ہے۔وندے بھارت ٹرین بھی ریاست میں چلائی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’چھتیس گڑھ میں 30 سے زیادہ اسٹیشنوں کو امرت بھارت اسٹیشن یوجنا کے تحت جدید ترین اسٹیشن بنایا جارہا ہے۔ ان میں سے 7 اسٹیشنوں کی جدید کاری کا سنگ بنیاد پہلے ہی رکھا جاچکا ہے ، ان کے ساتھ آج بلاسپور، رائے پور اور درگ اسٹیشنوں کے ساتھ جگدل پور اسٹیشن کو بھی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ’’آنے والے دنوں میں جگدل پور اسٹیشن شہر کا خاص مرکز بن جائے گا اور یہاں مسافروں کو جدیدترین سہولیات فراہم کرائی جائیں گی۔‘‘ انہوں نے کہا کہ’’پچھلے 9 برسوں میں ریاست کے 120 سے زیادہ اسٹیشنوں پر مفت وائی فائی سہولت فراہم کی گئی ہے۔‘‘حکومت چھتیس گڑھ کے عوام کے لئے زندگی کو آسان بنانے کی خاطر ہر ممکن کوششیں کررہی ہے۔ وزیر اعظم مودی نے یہ کہتے ہوئے اس بات کو اجاگر کیا کہ آج کے پروجیکٹ ریاست میں ترقی کی رفتار میں اضافہ کریں گے ، روزگار کے نئے مواقع پیدا کریں گے اور نئی صنعتوں کی ہمت افزائی کریں گے۔ خطاب کا اختتام کرتے ہوئے وزیر اعظم نے اس بات کی یقین دہانی کرائی کہ مرکزی حکومت چھتیس گڑھ کی ترقی کے سفر میں اپنا تعاون جاری رکھے گی اور ریاست ملک کی قسمت تبدیل کرنے میں اپنا رول ادا کریگی۔ انہوں نے اس موقع پر ریاست کی نمائندگی کرنے اور ریاست کی ترقی کے بارے میں فکرمند ہونے کے لئے چھتیس گڑھ کے گورنر بسوابھوشن ہری چندن کا شکریہ ادا کیا۔یوزیراعظم مودی نے کہا ہے کہ کسی بھی ریاست کی ترقی کے لئے بجلی اہم ہے اورتلنگانہ بجلی کی پیداوار میں خود مکتفی بن رہا ہے۔انہوں نے تلنگانہ کے ضلع نظام آباد میں بجلی،ریل اور صحت جیسے اہم شعبوں میں تقریباً 8000 کروڑ روپے کے مختلف ترقیاتی پروجیکٹوں کو قوم کے نام کیا۔اس موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہو ں نے ان پروجیکٹس پر تلنگانہ کو مبارکباد پیش کی۔انہوں نے کہاکہ آج پداپلی میں این ٹی پی سی کے پراجکٹ کے پہلے یونٹ کا آغاز کیاگیا ہے۔ جلد ہی دوسرایونٹ بھی شروع ہوگا جس سے اس کی گنجائش 4000میگااواٹ ہوجائے گی۔این ٹی پی سی کے پلانٹس میں یہ سب سے عصری پلانٹ ہے۔اس سے بجلی کی پیداوار کا بڑاحصہ تلنگانہ کو ملے گا۔ مودی نے کہاکہ انہوں نے2016میں اس پراجکٹ کا سنگ بنیاد رکھاتھا۔یہی حکومت کا ورک کلچر ہے۔انہوں نے زور دیتے ہوئے کہا کہ دھرم آباد۔منوہرآبادمجبوب نگر کرنول ریلوے اسٹیشن کے الکٹریشفیشن کو قوم کے نام سے کرنے سے تلنگانہ کیلئے کنکٹویٹی بڑھے گی۔انہوں نے کہاکہ ملک کی تمام ٹرینوں کے الکٹریفکنش کا کام کیاجائے گا۔انہوں نے نشاندہی کرتے ہوئے کہاکہ ہمارے ملک کے میڈیکل کالجس میں ایمس کی تعداد بڑھائی جارہی ہے۔تلنگانہ کے بی بی نگر میں ایمس کا کام چل رہا ہے۔انہوں نے کہاکہ مریضوں کی تعداد کو پیش نظر رکھتے ہوئے ایمس میں ڈاکٹرس اور طبی عملہ کی تعداد میں بھی اضافہ کیاجارہا ہے۔انہوں نے کہاکہ آیوشمان بھارت سے تلنگانہ میں 70ہزارسے زائد افراد کو پانچ لاکھ روپئے تک علاج کی سہولت فراہم کی جارہی ہے اور تقریبا 80فیصد رعایت پر دوائیں فراہم کی جارہی ہے۔ تلنگانہ میں پانچ ہزارویلنس سنٹرس کام کررہے تھے۔انہوں نے کہاکہ کورونا کے دور میں تلنگانہ میں بڑے پیمانہ پر آکسیجن پلانٹس قائم کئے گئے تھے۔قبل ازیں مودی نے این ٹی پی سی کے تلنگانہ سوپر تھرمل پاور پروجیکٹ کے پہلے مرحلہ کے 800 میگاواٹ یونٹ کو قوم کے نام کیا۔یہ تلنگانہ کو کم قیمت پر بجلی فراہم کرے گا اور ریاست کی اقتصادی ترقی کو فروغ دے گا۔یہ ملک کے سب سے زیادہ ماحولیات سے مطابقت رکھنے والے پاور اسٹیشنوں میں سے ایک ہوگا۔تلنگانہ کے ریل انفراسٹرکچر کو فروغ ملے گا۔ وزیر اعظم نے منوہرآباد اور سدی پیٹ کو جوڑنے والی نئی ریلوے لائن کے بشمول ریل پروجیکٹوں کو قوم کے نام کیا۔ مودی نے سدی پیٹ۔سکندرآباد۔ سدی پیٹ ٹرین کو بھی ہری جھنڈی دکھائی۔