ہندوستان کا تعلیمی نظام روایتی علم، جدید ترین ٹیکنالوجی کا انوکھا امتزاج: ڈاکٹر جتیندر

بلور// مرکزی وزیر مملکت (آزادانہ چارج) سائنس اور ٹیکنالوجی،وزیر اعظم کے دفتر، عملہ، عوامی شکایات، پنشن، ایٹمی توانائی اور خلائی وزیر، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا، ہندوستان کا تعلیمی نظام روایتی علم اور جدید ترین عالمی معیار کی ٹیکنالوجی کا ایک منفرد امتزاج پیش کرتا ہے، اس طرح ہندوستان کو دنیا کی قیادت کرنے کا ایک خصوصی فائدہ ملتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چندریان-3، آدتیہ-ایل1، دنیا کی پہلی میڈ ان انڈیا ڈی این اے ویکسین وغیرہ ہندوستانی گرومنگ کے اس خصوصی فائدہ کی تائید کرتی ہیں۔ڈاکٹر جتیندر سنگھ ضلع کٹھوعہ میں یہاں کے قریب واقع بھارتیہ ودیا مندر سینئر سیکنڈری اسکول، دادوارہ (فنٹر) میں ایک تعلیمی پروگرام سے خطاب کر رہے تھے۔پروگرام کے دوران ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا، ہندوستان اب پی ایم نریندر مودی کی قیادت میں دنیا کی بہترین ترقی یافتہ معیشتوں سے آگے ہے جس کا ایک دہائی قبل تصور بھی نہیں کیا گیا تھا۔ ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے مزید کہادنیا اب چاہتی ہے کہ ہندوستان تقریباً ہر میدان میں ان کی رہنمائی کرے، جی 20 کی کامیابی، 2023 کو جوار کا بین الاقوامی سال قرار دینے کی تجویز کو قبول کرنا، بین الاقوامی یوگا کا عالمی دن بننا وغیرہ موجودہ حکومت کے تحت ہندوستان کی قابلیت کو ظاہر کرتا ہے۔بین الاقوامی تعاون اور شراکت داری کے ذریعے تحقیق اور اختراع کے ذریعے، ہندوستان نیٹ زیرو کے اخراج کے ہدف کو حاصل کرنے کے لیے بھی پرعزم ہے جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ہندوستان بھی عالمی خدشات کو دور کرنے اور وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں عالمی ماحولیاتی تحریک کی قیادت کر رہا ہے۔طلباء سے خطاب کرتے ہوئے، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا، قومی تعلیمی پالیسی-2020 نے اس ملک کے نوجوانوں کے لیے نئے راستے کھولے ہیں جو اب خواہشات کا قیدی نہیں رہے بلکہ اس کی خواہشات بہت زیادہ ہیں اور بہت سارے مواقع ہیں، جس میں بے شمار مواقع ان کے دروازے پردستک دے رہے ہیں۔ ہندوستان بھر میں بھارتیہ ودیا مندر اسکولوں کے تعاون کی تعریف کرتے ہوئے، ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا، ان اسکولوں نے نہ صرف اپنے طلبا میں ثقافتی اقدار کو جنم دیا ہے بلکہ انہیں ہندوستان کے ترقی کے سفر کا حصہ بننے کے قابل بنایا ہے جس کی نمائش اس وقت کی گئی ہے جب اس کے سابق طالب علموں کو جی 20، چندریان مشن وغیرہ کا حصہ رہا ہے۔