جرائم اور سلامتی سے متعلق جی 20کانفرنس سائبر سیکورٹی کے لیے بین الاقوامی سطح پر تعاون ضروری

The Union Minister for Home Affairs and Cooperation, Shri Amit Shah addressing at the inaugural session of G20 Conference on Crime and Security in the age of NFTs, Artificial Intelligence and Metaverse, in Gurugram, Haryana on July 13, 2023.

دہشت گرد تشدد نوجوانوں کو بنیاد پرست بنانے اور مالی وسائل جمع کرنے کے نئے طریقے تلاش کر رہے ہیں : وزیر داخلہ
یو این آئی
نئی دہلی//مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے کہا کہ دہشت گرد اور سائبر مجرم تشدد کو انجام دینے، نوجوانوں کو بنیاد پرست بنانے اور مالی وسائل جمع کرنے کے لیے ٹیکنالوجی کا غلط استعمال کرنے کے نئے طریقے تلاش کر رہے ہیں، اس لیے سائبر سیکورٹی کو مضبوط بنانے کے لئے پوری دنیا میں قومی اور بین الاقوامی سطح پر باہمی تعاون کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔شاہ نے جمعرات کو ہریانہ کے گروگرام میں سائبر اور ورچوئل ورلڈ میں جرائم اور سلامتی سے متعلق جی-20 کانفرنس کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ آج کی ڈیجیٹل دنیا میں واسودھیو کٹمبکم یعنی ‘ایک زمین، ایک خاندان ایک مستقبل’ کا تصور سب سے زیادہ متعلقہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیکنالوجی نے حدود کی تمام رکاوٹوں کو توڑ کر پوری دنیا کو ایک بڑا گلوبل ولیج بنا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک مثبت ترقیاتی سرگرمی ہے لیکن کچھ سماج دشمن عناصر اور خود غرض عالمی قوتیں اس کا شہریوں اور حکومتوں کو معاشی اور سماجی نقصان پہنچانے کے لیے استعمال کر رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس لیے یہ کانفرنس مزید اہم ہو جاتی ہے۔وزیر داخلہ نے کہا کہ سائبر سیکورٹی اب صرف ڈیجیٹل دنیا تک محدود نہیں ہے۔ یہ قومی سلامتی یعنی عالمی سلامتی کا معاملہ بن گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان نچلی سطح پر ابھرتی ہوئی ٹکنالوجیوں کو اپنانے میں پیش پیش رہا ہے اور اس کا مقصد معاشرے کے تمام طبقات کے لیے جدید ٹیکنالوجی کو مزید قابل رسائی اور سستی بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کے پیش نظر سائبر خطرات کے امکانات بھی بڑھ گئے ہیں۔ انٹرپول کی 2022 کی رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سائبر کرائمز کے کچھ رجحانات جیسے کہ رینسم ویئر، فشنگ، آن لائن گھپلے، آن لائن بچوں سے جنسی زیادتی اور ہیکنگ پوری دنیا میں ایک سنگین خطرہ ہیں اور مستقبل میں ان میں کئی گنا اضافہ ہونے کا امکان ہے۔ انہوں نے کہا کہ جی-20 نے اب تک معاشی نقطہ نظر سے ڈیجیٹل تبدیلی اور ڈیٹا کے بہاؤ پر توجہ مرکوز کی ہے، لیکن اب جرائم اور سیکورٹی کے طریقہ کار کو سمجھنا اور حل تلاش کرنا بہت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان خطرات کے پیش نظر حکومت ان سے نمٹنے کے لیے بروقت اقدامات کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔مسٹر شاہ نے کہا کہ اس کانفرنس کا مقصد ‘ڈیجیٹل پبلک گڈس’ اور ‘ڈیجیٹل پبلک انفراسٹرکچر’ کو بااختیار بنانے اور محفوظ بنانے کے لیے ایک محفوظ اور محفوظ بین الاقوامی فریم ورک کو فروغ دینا اور ٹیکنالوجی کی طاقت کو بہترین طریقے سے استعمال کرنا ہے۔مسٹر شاہ نے کہا کہ ہمارے روایتی سیکورٹی چیلنجز میں ‘ڈائنامیٹ سے میٹاورس’ اور ‘حوالہ سے کرپٹو کرنسی’ میں تبدیلی یقیناً دنیا کے ممالک کے لیے تشویش کا موضوع ہے اور اس کے خلاف مشترکہ حکمت عملی بنانے کے لیے سب کو مل کر کام کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گرد تشدد کے نئے طریقے تلاش کر رہے ہیں، نوجوانوں کو بنیاد پرست بنانے اور مالی وسائل جمع کرنے کے نئے طریقے تلاش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان کے خلاف کریک ڈاؤن کرنے کے لیے، ایک “مضبوط اور موثر آپریشنل نظام” کی طرف مربوط طریقہ سے سوچنا ضروری ہے۔مسٹر شاہ نے کہا کہ کوئی بھی ملک یا تنظیم اکیلے سائبر خطرات کا مقابلہ نہیں کر سکتی، اس کے لیے متحدہ محاذ کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا، “ہمارے مستقبل نے ہمیں ٹیکنالوجی کو حساسیت کے ساتھ استعمال کرنے اور عوامی تحفظ اور تحفظ کو یقینی بنانے کے اپنے عزم پر ثابت قدم رہنے کا موقع فراہم کیا ہے، اور یہ کام اکیلے حکومتیں نہیں سنبھال سکتیں۔ ہمارا مقصد ‘سائبر سکسیس ورلڈ’ بنانا ہے نہ کہ ‘سائبر فیلیور ورلڈ’۔ انہوں نے کہا کہ ہم سب کے لیے ایک محفوظ اور خوشحال ڈیجیٹل مستقبل کو یقینی بناتے ہوئے ٹیکنالوجی کی صلاحیت کو بروئے کار لا سکتے ہیں۔اس کانفرنس میں وزیر مملکت برائے داخلہ اجے کمار مشرا، مرکزی وزیر برائے اطلاعات و ٹکنالوجی راجیو چندر شیکھر اور مرکزی داخلہ سکریٹری سمیت کئی معززین موجود تھے۔ دو روزہ کانفرنس میں جی-20 ممالک، 9 خصوصی مدعوئین، بین الاقوامی تنظیمیں، ٹیکنالوجی لیڈرز، ہندوستان اور پوری دنیا سے ڈومین ماہرین سمیت 900 سے زیادہ مندوبین شرکت کر رہے ہیں۔