ہمیں پرانا جموں وکشمیر ہی چاہئے، نئے کی ضرورت ہیں

اقتدار میں آیا تو خطہ پیر پنچال میں ترقیاتی انقلاب لاؤں گا:غلام نبی آزاد
اُڑان نیوز
راجوری//راجوری کے اپنے دورے کے دوسرے دن ڈیموکریٹک پروگریسو آزاد پارٹی کے چیئرمین غلام نبی آزاد نے جموں اور کشمیر یونین ٹیریٹری کی بڑھتی ہوئی بے روزگاری، مہنگائی اور گرتی ہوئی معیشت پر اپنی تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کے لوگوں کو متعدد چیلنجوں کا سامنا ہے کیونکہ مقامی لوگوں سے نوکریاں اور زمینیں چھینی جا رہی ہیں۔ آزاد نے تھانہ منڈی، کالاکوٹ، راجوری شہر، درہال، نوجوانوں اور دیگر علاقوں سے پارٹی کارکنوں اور مختلف وفود سے بات چیت کرتے ہوئے کہا۔ انہوں نے کہا، تاہم، اگر ان کی پارٹی اقتدار میں آتی ہے تو وہ مقامی لوگوں کی حالت زار پر خاموش تماشائی نہیں بنے گی اور لوگوں کی ملازمتوں اور زمین کے حقوق کو محفوظ بنانے کے لیے تمام سیاسی اور قانونی اقدامات کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ چناب اور پیر پنچال جیسے کچھ خطوں کو زیادہ چیلنجز کا سامنا ہے کیونکہ وہ خشکی سے گھرے ہوئے ہیں اور انہیں یکے بعد دیگرے آنے والی حکومتوں نے نظر انداز کیا ہے جس میں روزگار کے مواقع اور معاشی ترقی نہیں ہے۔ “جب میں سابق ریاست میں جموں و کشمیر حکومت کی سربراہی کر رہا تھا، میں نے خطے پر خصوصی توجہ دی اور اسے معاشی طور پر ترقی دینے کی کوشش کی۔ اس کے بعد سے لگتا ہے کہ کسی نے بھی اس خطے کی ضروریات اور خواہشات کو نہیں سمجھا۔ آزاد نے کہا کہ انتظامیہ کے موجودہ گورننگ سسٹم نے پیر پنچال خطے کے لوگوں کو پریشان کر دیا ہے جو ان کی دہلیز پر بہتر حکمرانی کے مستحق ہیں۔ انہوں نے علاقے میں خصوصی بھرتی مہم چلانے کا مطالبہ کیا۔ غلام نبی آزاد نے کہاکہ ہمیں پراناجموں و کشمیر ہی چاہئے نئے کی کوئی ضرورت نہیں۔انہو ں نے مزید بتایا کہ جی ٹونٹی سربراہی اجلاس غیر معمولی اہمیت کا حامل تھا۔ان باتوں کا اظہار موصوف نے راجوری میں نامہ نگاروں سے بات چیت کے دوران کیا۔انہوں نے کہاکہ یہاں کے لوگ نئے جموں وکشمیر کے بجائے پرانی ریاست چاہتے ہیں۔ان کے مطابق دفعہ 370کی واپسی ، جن لوگوں کو زمینوں سے بے دخل کیا گیا انہیں اپنا حق واپس ملنا چاہئے۔ نوکریوں پر یہاں کے لوگوں کو ہی حق ہونا چاہئے لہذا پرانا جموں وکشمیر ناگزیر ہے۔حد بندی کمیشن کے بارے میں غلام نبی آزاد نے کہاکہ وہ حد بندی نہیں بلکہ کچھ اور ہی تھا۔پارلیمنٹ کی نئی عمارت تعمیر ہونے کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں غلام نبی آزاد نے کہاکہ سب ممبران پارلیمان کو اس خیر مقدم کرنا چاہئے۔انہوں نے کہاکہ جی ٹونٹی کا سربراہی اجلاس غیر معمولی اہمیت کا حامل تھا تاہم یہ اجلاس جموں میں بھی ہونا چاہئے تھا لیکن حکومت نے فیصلہ کیا وہ ریاست کے لوگوں کے لئے بہتر تھا۔