مظاہروں کے ساتھ درباردفاتر کااستقبال

مظاہروں کے ساتھ درباردفاتر کااستقبال
متعدد ملازم تنظیموں نے مطالبات کے حق میں نعرہ بازی کی
الطاف حسین جنجوعہ
جموں//متعدد سرکاری ملازم تنظیموں نے سرمائی راجدھانی جموں میں دربار موو دفاتر کا استقبال احتجاجی مظاہرو¿ں سے کیا۔پیر کے روز پریس کلب جموں کے باہر درجنوں ملازم تنظیموں نے دیرینہ مطالبات کے حق میں احتجاجی مظاہرے کئے۔ مظاہرین نے حق میں نعرے بلند کرتے ہوئے گورنر سے مطالبات کے ازالہ کے لئے ذاتی مداخلت کی اپیل کی۔پریس کلب جموں کے باہر پولیس اہلکار دن بھر کافی مشقت کرتے دکھائی دیئے۔درجنوں احتجاجی ملازمین گروپوں نے سول سیکریٹریٹ دفاتر کی طرف جلوس نکالنے کی کوشش کی جنہیں پولیس کی بھاری نفری نے ناکام بنادیا۔اس دوران پولیس کی دھکا مکی، ہاتھا پائی، تلخ کلامی اورلفظی تکرار بھی دیکھنے کو ملی۔سروشکشا ابھیان اور رہبرِ تعلیم اساتذہ ٹیچرز کے دوگرپوں نے بقیہ اجرتوں کی واگذاری اور ساتویں تنخواہ کمیشن کے اطلاق کے لئے دھرنا دیا۔ پاور ڈولپمنٹ ڈپارٹمنٹ کے نیڈبیسڈ اور کیجول ورکروں نے چیف انجینئر دفتر کے باہر دھرنا دیا اور کئی سالوں سے بقیہ تنخواہیں واگذار کرنے کی مانگ کی۔ سٹیٹ روڈ ٹرانسپورٹ کارپوریشن سے رضاکارانہ طور سبکدوش ہوئے ملازمین ایک گروپ نے پریس کلب نمائش گراو¿نڈ کے بعد احتجاج کیا اور سول سیکریٹریٹ کی طرف پیش قدمی کی کوشش کی جس سے پولیس نے ناکام بنادیا۔وہ چھٹے پے کمیشن کے بقیہ جات جنوری 2006سے دینے ، 1999سے کاسٹ آف لیونگ الاو¿نس ایریرز(COLA)اور دیگر پنشن فوائید دینے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ نان گزیٹیڈ پولیس پنشنرز ویلفیئر فورم اور خدمت سینٹرز ایسو سی ایشن نے بھی اپنے مطالبات کے حق میں مظاہرے کئے۔ احتجاجی مظاہرین نے گورنرستیہ پال ملک سے مطالبات کے ازالہ کے لئے ذاتی مداخلت کی اپیل کی ۔