ہند پاک پانچویں جنگ کشمیر مسئلہ کا حل نہیں قیام امن بات چیت کے ذریعے ممکن:ڈاکٹر فاروق

ایجنسیاں
جموں//کشمیر کو لے کر نئی دلی میں وزیر اعظم کی قیادت میں کل جماعتی اجلاس منعقد کرنے اورہند پاک بات چیت کو یقینی بنانے کےلئے کسی”دوست ملک“ کی خدمات حاصل کرنے کی تجویز پیش کرتے ہوئے ریاست کے سابق وزیر اعلیٰ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان پانچویں جنگ کشمیر میں قیام امن کا حل نہیں ہے بلکہ دونوں ملکوں کو کسی بھی صورت میں مذاکرات کا راستہ اختیار کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ کشمیری عوام تشدد اور خون خرابے سے تنگ آگئے ہیں اور یہاں بہت خون بہہ چکا ہے۔ڈاکٹر عبداللہ نے علیحدگی پسندوں کے ساتھ بات چیت پر آمادگی کا اظہار اور سنگبازوں کی رہائی کا مطالبہ بھی کیا ۔ نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے ایک انٹرویو کے دوران یہ بات زور دے کرکہی کہ ریاست جموں کشمیر میں امن کا قیام صرف اور صرف بات چیت کے ذریعے ہی ممکن ہوسکتا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ تشدد سے متاثرہ ریاست میں امن قائم کرنے کی کوششیں ناکام ہونے کے باوجود صرف بات چیت ہی آگے بڑھنے کا واحد راستہ ہے۔اس ضمن میں انہوں نے کہا”ہم نے پاکستان کے ساتھ چار جنگیں لڑی ہیں، کیا پانچویں جنگ آگے بڑھنے کا ایک اور طریقہ ہے؟ہم بات چیت کرنا بند نہیں کرسکتے ، ہمیں آگے کا راستہ ڈھونڈ نکالنا ہوگا اور اسی سے ہم کسی حل پر پہنچ سکتے ہیں“۔ جب ڈاکٹرفاروق عبداللہ سے یہ پوچھا گیا کہ پاکستان کی طرف سے دراندازوں کو اِس پار دھکیلنے کے باوجود عسکری سرگرمیوں کا خاتمہ اور قیام امن کس طرح ممکن بنایا جاسکتا ہے؟تو انہوں نے کہا”میرا خیال ہے کہ اگر ہم سب سر جوڑ کر بیٹھ جائیں تو ہم کوئی حل تلاش کرسکتے ہیں، ہمیں دلی میں وزیر اعظم کی سربراہی میں ایک کانفرنس کا انعقاد کرنا چاہئے ، کوئی ایک پارٹی اس کا حل نہیں نکال سکتی، تمام سیاسی پارٹیوں کو کانفرنس میں بلایا جانا چاہئے“۔کشمیر میڈیا نیٹ ورک کے مطابق نیشنل کانفرنس کے صدر نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ یہ ضروری ہیں ہے کہ بات چیت کا آغاز خود وزیر اعظم ہی کریں۔اس ضمن میں ان کا کہنا تھا”میں نے یہ کبھی نہیں کہا کہ خود وزیر اعظم کو بات کرنی چاہئے، دیگر کئی طریقے اختیارکئے جاسکتے ہیں، ایسے ممالک کا استعمال کیا جائے جو بھارت اور پاکستان دونوں کے دوست ہیں“۔کشمیر کی موجودہ صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے ریاست کے سابق وزیر اعلیٰ نے کہا”ہم سب(ریاستی عوام) تشدد سے تنگ آگئے ہیں، میں خدا سے دعا کرتا ہوں کہ اس کا خاتمہ ہوجائے، بہت خون بہہ چکا ، اب وقت آگیا ہے کہ ہم نہ صرف جموں کشمیر بلکہ پورے ملک میں قیام امن کے بارے میں سوچیں“۔ڈاکٹر فاروق عبداللہ کا مزید کہنا تھاکہ وہ علیحدگی پسندوں سمیت کسی سے بھی بات چیت کرنے کےلئے تیار ہیں۔انہوں نے اس بارے میں کہا”میں کسی کے ساتھ بھی بات کرنے کےلئے تیار ہوں ، اگر اس سے امن کا قیام ممکن ہوتا ہے، میں جنگ کی وکالت نہیں کرتا بلکہ امن چاہتا ہوں“۔اس سوال کے جواب میں کہ فوج کی بھاری موجودگی کے بیچ کشمیریوں کے دلوں کو کس طرح سے جیتا جاسکتا ہے؟نیشنل کانفرنس کے صدر نے کہا”لوگوں سے پیا رکیجئے اور پر بھروسہ کیجئے،ہم ہندوستانی ہیں، پاکستانی نہیں!کشمیری اتنا ہی بھارت کا حصہ ہیں جتنا کہ ملک کے دیگر لوگ“۔انہوں نے کہا کہ کشمیری جو کچھ بھی کہتا ہے ، اسے ملک دشمن اور پاکستان نواز سمجھا جاتا ہے ۔ڈاکٹر عبداللہ نے بتایا”میرے وزراءاور پارٹی کے ورکر مارے گئے لیکن ہمیں پھر بھی غدارسمجھا جاتا ہے، آپ کشمیری کو پشت بہ دیوار نہیں کرسکتے، آپ کو اُسے پھرجیتے کےلئے آگے بڑھنا ہوگا“۔ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے سنگبازوں کی رہائی کا مطالبہ بھی کیا اور کہا کہ ایسا کرکے انہیں اپنی غلطیوں کا احساس دلایا جاسکتا ہے۔