نالج انیشیٹو نے وزیر اعلیٰ کو سفارشات پیش کیں محبوبہ مفتی نے ریاست میں نالج انڈسٹری کو معرض وجود میں لانے پر زور دیا

اڑان نیوز
جموں // وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے ریاست میں تعلیمی شعبۂ کو بڑھاوا دینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ ضروری بنیادی ڈھانچے کو معرض وجود میں لایا جانا چاہئے تا کہ قومی سطح کے بہتر انسانی وسائل پیدا کئے جاسکیں۔حکومت کی جانب سے کچھ عرصہ قبل قائم کئے گئے نالج انیشیٹو کی سفارشات کو پیش کرنے سے متعلق ایک تقریب میں بولتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ریاست میں اعلیٰ تعلیم کے متعدد اداروں کے قیام سے جموں وکشمیر علم کے مرکز کے طور اُبھر رہا ہے جس سے ریاست میں قومی اور بین الاقوامی سطح کے معیاری انسانی وسائل پیدا کرنے میں مدد ملے گی۔رپورٹ کی سفارشات پر اِتفاق ظاہر کرتے ہوئے محبوبہ مفتی نے ان سفارشات کو ایکشن پلان میں تبدیل کرنے کی ضرورت پر زور دیا تا کہ ان کو ریاست میں نالج انڈسٹری کو معرض وجود میں لانے کے لئے عملایا جاسکے۔انہوں نے تعلیم، صنعت اور جاب مارکیٹ پر کام کرنے کی ضرورت پر زور دیا تا کہ ان سفارشات کے خاطر خواہ نتائج برآمد ہوسکیں۔وزیر اعلیٰ نے مقامی نظام کو بروئے کار لاکر تعلیم کو نالج پر مبنی بنانے کی اہمیت کو اُجاگر کیا تا کہ فارغ التحصیل جاب مارکیٹ میں نالج کی بنیادوں پر اپنے لئے روز گار حاصل کرسکیں۔ اس ضمن میں انہوں نے کالج اور صنعت کے مابین خیالات کے تبادلوں،اپرنٹشِپ، انکیوبیشن سینٹر وں کے قیام پر کام کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ نالج انیشیٹو کی یہ رپورٹ ریاست کے تینوں خطوں سے وابستہ شراکت داروں جن میں طُلاب، اساتذہ، صنعت سے وابستہ نمائندے شامل ہیں،کے تجزیہ کی بنیادوں پر مبنی ہے۔وزیر تعلیم سید محمد الطاف بخاری، وزیر اعلیٰ کے مشیر پروفیسر امیتابھ مٹو، چیف سیکرٹری بی بی ویاس،وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری روہت کنسل، پرنسپل سیکرٹری اعلیٰ تعلیم ڈاکٹر اصغر سامون، دیگر سنیئر افسران اور نالج انیشیٹو کے نمائندے بھی پریذنٹیشن کے موقعہ پر موجود تھے۔