شاہراہ تیسرے روز بھی بند کئی مقامات پر تازہ پسیاں گر آئیں ، سینکڑوں مجبور مسافروں نے خطرہ مول لیتے ہوئے خطرناک مقامات پیدل پار کئے

دانش وانی
بانہال // جموں، سرینگر قومی شاہراہ بدھ وار کوتیسرے روز بھی تازہ پسیاں گر آنے کی وجہ آمد و رفت کے لئے بند رہی ۔ اگرچہ گذشتہ روز رام بن کے نزدیک بیٹری چشمہ میں انوکھی فال کے مقام پر گر آنے والی پسی کو بدھ کی بعد دو پہر 2بجے کے قریب ہٹا کر درماندہ گاڑیوں کو وادی کی طرف نکالنے کی کوشش کی گئی تھی لیکن ابھی کچھ ہی گاڑیاں پسی عبور کر پائی تھیں کہ ماروگ رام بن میں تازہ پسی گر آئی حس نے مسافروں اور ٹریفک پولیس و انتظامیہ کی ا±میدوں پر پانی پھیر دیا۔ذرائع نے بتایا کہ شاہراہ کے بند ہو نے کی وجہ سے درماندہ مسافروں کو کافی پریشان ہو نا پڑ رہا ہے ۔ ذرائع کے مطابق ان میں زیادہ تر تعداد طلبا اور بے روز گار نوجوان شامل ہیں جنہیں مختلف امتحانات اور انٹرویوز کے لئےت جموں اور سرینگر جا نا تھا ۔ بیشتر مجبور درماندہ مسافروں نے جان ہتھیلی پر رکھتے ہوئے پیدل ان پسیوں کو عبور کر کے اپنی منزلوں کی طرف جانے کی کوشش کی ۔ تاہم اودہم پور کے نزدیک کھیری ے مقام پر پسی گر آ نے کی وجہ سے جموں کی طرف جانے والوں پھر درماندہ ہو نا پڑا ۔ ذرائع نے بتایا کہ شاہراہ کی چار گلیارہ توسیع پر مامور تعمیراتی کمپنیوں نے ماروگ ،کھیری اودہم پور اور دوسری جگہوں پر ملبہ ہٹانے کا کام زور و شور سے جاری رکھا ہے ۔ ٹریفک پولیس حکام کے مطابق ماروگ پسی کو ہٹا کر رام بن اور اودہم پور کے سیکٹر میں درماندہ ٹریفک کو وادی کی طرف نکالنے کی کوشش کی جائے گی ۔ آخری اطلات موصول ہونے تک ماروگ کے مقام پر بدھ کی شام 6بجے کے قریب شاہراہ کو بحال کر کے گاڑیوں کو نکالنے کی کوشش کی گئی لیکن اسی دوران پہاڑی سے ملبہ اور چٹانیں گر آنے سے معاملہ چوپٹ ہو گیا ۔ آخری اطلاعات ماروگ پسی کے دونوں طرف درماندہ مسافروں کو انتظامیہ نے بانہال اور رام بن کی طرف واپس بھیج دیا ہے ۔ ذرائع نے بتایا کہ اس پسی پر مسلسل پتھر گر رہے ہیں جس کی وجہ سے شاہراہ کی بحالی کا کام رات بھر کے لئے ملتوی کر دیا گیا ہے ۔