موسم کا مزاج بدلا

11SRNP1:- SRINAGAR, DECEMBER 11 (UNI) A view of fresh snowfall at world famous ski resort Gulmarg on Monday.

وادی کشمیر کا بیرونی دنیا سے زمینی رابطہ منقطع،پروازیں بھی متاثر
بالائی علاقوں میں برف باری اور میدانی علاقوں میں بارشیں
یو این آئی
سری نگر؍ جموں// جموں وکشمیر کے بالائی علاقوں میں برف باری جبکہ میدانی علاقوں میں بارش کا سلسلہ اتوار اور پیر کی درمیانی رات سے وقفہ وقفہ سے جاری ہے۔ تازہ بارش اور برف باری کے سبب ریاست بھر میں پیر کو معمول کی زندگی متاثر رہی۔ بارشوں اور بالائی علاقوں میں بھاری برف باری کے سبب وادی کا بیرون دنیا سے زمینی رابطہ منقطع ہوگیا ہے۔ وادی کشمیر کو خطہ جموں سے جوڑنے والی سری نگر جموں شاہراہ پیر کو قریب سہ پہر چار بجے گاڑیوں کی آمدورفت کے لئے بند کردی گئی۔ ایک ٹریفک پولیس عہدیدار نے یو این آئی کو بتایا ’شدید بارش کے باعث شاہراہ کے کئی مقامات پر پتھر گرآئے جس کے بعد ہم نے اس پر قریب چار بجے گاڑیوں کی آمدورفت روک دی۔ شاہراہ کو احتیاطی طور پر بند کردیا گیا ہے۔ مختلف مقامات پر تعینات ٹریفک پولیس عہدیداروں کی جانب سے گرین سگنل ملنے کے بعد شاہراہ پر گاڑیوں کی آمدورفت بحال کی جائے گی‘۔ جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیان کو جموں خطہ کے راجوری اور پونچھ اضلاع سے جوڑنے والے تاریخی مغل روڑ اور 86 کلو میٹر طویل بانڈی پورہ گریز روڑ کو بھی گاڑیوں کی آمدورفت کے لئے بند کردیا گیا ہے۔ شمالی کشمیر میں درجن بھر سڑکوں کا اپنے متعلقہ ضلع ہیڈکوارٹروں سے رابطہ کٹ گیا ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق سری نگر کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر پیر کو کم روشنی کے سبب چند ایک پروازوں کی آواجاوی متاثر رہی۔ محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ ریاست میں بارش اور برف باری کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے 15 دسمبر تک جاری رہ سکتا ہے۔ شمالی کشمیر میں واقع شہرہ آفاق سیاحتی مقام گلمرگ میں برف باری کا سلسلہ اتوار اور پیر کی درمیانی شب سے جاری ہے۔ گلمرگ سے ایک نامہ نگار نے یو این آئی کو فون پر بتایا کہ اس شہرہ آفاق سیاحتی مقام کے میدانی حصے میں قریب 7 انچ برف جمع ہوگئی ہے۔ گلمرگ کے بالائی حصوں بشمول افروٹ اور کونگ ڈوری میں بھاری درجے کی برف باری ہوئی ہے۔ مذکورہ نامہ نگار نے بتایا کہ جاری برف باری کے باوجود یہاں آنے والے سیاح سیر وتفریح میں مصروف ہیں۔ انہوںنے بتایا کہ بیشتر سیاحوں کا کہنا تھا کہ وہ خوش قسمتی ہیں کہ انہیں گرتی ہوئی برف کو دیکھنے کا موقع نصیب ہوا۔ نامہ نگار نے مزید بتایا کہ گلمرگ میں سیاحوں کی بلاخلل آمد کو یقینی بنانے کے لئے ٹنگمرگ گلمرگ روڑ پر برف ہٹانے کا کام پیر کی علی الصبح سے ہی جاری تھا۔ گلمرگ میں گذشتہ رات کم سے کم درجہ حرارت منفی 2 اعشاریہ 4 ڈگری ریکارڈ کیا گیا ہے۔ شمالی کشمیر کے دوسرے بالائی علاقوں لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کے نزدیک واقع دیہات میں بھی تازہ برف باری ہوئی ہے۔ شمالی کشمیر کے میدانی علاقوں بشمول کپواڑہ، بانڈی پورہ، ہندواڑہ، بارہمولہ اور سوپور میں بارش کا سلسلہ گذشتہ رات قریب گیارہ بجے سے جاری ہے۔ جنوبی کشمیر کے تمام بالائی علاقوں میں بھی برف باری کا سلسلہ گذشتہ رات سے وقفہ وقفہ سے جاری ہے۔ مشہور سیاحتی مقام پہلگام سے ایک ہوٹل مالک نے یو این آئی کو فون پر بتایا ’یہاں میدانی حصے میں کبھی بارش تو کبھی برف باری کا سلسلہ جاری ہے۔ تاہم بالائی حصوں میں اچھی خاصی برف گری ہے‘۔ ایک رپورٹ کے مطابق پہلگام کے بالائی حصوں بشمول پوتر امرناتھ گھپا اور اس سے ملحقہ حصوں پنج ترنی، شیش ناگ، پسو ٹاپ، مہاگنس اور چندن واڑی میں درمیانہ سے بھاری درجے کی برف باری ہوئی ہے۔ پہلگام میں گذشتہ رات کم سے کم درجہ حرارت ایک اعشاریہ 5 ڈگری ریکارڈ کیا گیا ہے۔ تاریخی مغل روڑ پر بھی تازہ برف باری ہوئی ہے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا ’پیر کی گلی اور دوسرے مقامات پر درمیانہ سے بھاری درجے کی برف باری کے بعد اس روڑ کو گاڑیوں کی آمدورفت کے لئے بند کیا گیا‘۔ وسطی اضلاع گاندربل اور بڈگام کے بالائی علاقوں بشمول سونہ مرگ، دودھ پتھری، توسہ میدان اور یوسمرگ میں بھی برف باری ہوئی ہے۔ ادھر گرمائی دارالحکومت سری نگر جہاں گذشتہ رات کم سے کم درجہ حرارت 3 اعشاریہ ایک ڈگری ریکارڈ کیا گیا، میں گذشتہ رات قریب گیارہ بجے سے بارشوں کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے جاری ہے ۔ دوسری جانب جموں خطہ کے میدانی علاقوں میں پیر کی صبح تیز بارشیں ہوئیں جبکہ خطہ کے بالائی علاقوں بالخصوص بھدرواہ اور ڈوڈہ کے پہاڑی علاقوں میں تازہ برف باری ہوئی ہے۔ میدانی علاقوں میں تیز بارشوں کے سبب کم سے کم درجہ حرارت گر کر 8 ڈگری پر آگیا ہے۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق خطہ کے بالائی علاقوں بالخصوص بھدرواہ اور ڈوڈہ میں گذشتہ رات تازہ برف باری ہوئی ہے۔ میدانی علاقوں میں بارشوں جبکہ بالائی علاقوں میں برف باری کے سبب پورا جموں خطہ سردی کی لپیٹ میں آگیا ہے۔ تاہم خطہ میں بارشوں سے کسانوں کے چہرے خوشی سے کھل اٹھے ہیں۔ ان کا ماننا ہے کہ یہ بارشیں گیہوں کی فصل کے لئے انتہائی ضروری تھیں۔ جموں میں لوگوں نے بتایا کہ گذشتہ قریب ڈیڑھ ماہ سے کوئی بارش نہیں ہوئی تھی جس کی وجہ سے پورے خطہ میں سرد موسم کی بیماریوں جیسے کھانسی، بخار اور زکام نے اہلیان جموں کو پریشان کر رکھا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ اس بارش کے نتیجے میں لوگوں کو ان بیماریوں سے نجات ملے گی۔ خطہ لداخ سے موصولہ اطلاعات کے مطابق سرحدی قصبہ کرگل اور خطہ کے تمام بالائی علاقوں میں تازہ برف باری ہوئی ہے۔ اگرچہ خطہ لداخ کو وادی کشمیر کے ساتھ جوڑنے والی 434 کلو میٹر طویل سری نگر لیہہ شاہراہ کو اتوار کے روز ہی موسم سرما کے مہینوں کے لئے بند کردیا گیا تھا، تاہم قصبہ کرگل میں پیر کو برف باری کے باوجود بیشتر سڑکوں پر گاڑیوں کی آمدورفت معمول کے مطابق جاری رہی۔ ایک رپورٹ کے مطابق قصبہ کرگل میں پیر کی صبح قریب تین انچ برف جمع ہوگئی تھی۔ سری نگر لیہہ شاہراہ اب قریب پانچ ماہ تک بند رہنے کے بعد اگلے سال اپریل کے اواخر یا مئی کے اوائل میں کھولی جائے گی۔ اس شاہراہ پر سونہ مرگ سے مین مرگ دراس تک بھاری برف باری ہوئی ہے۔ لیہہ اور کرگل میں گذشتہ رات کم سے کم درجہ حرارت بالترتیب منفی 3 اعشاریہ 7 اور صفر اعشاریہ ایک ڈگری ریکارڈ کیا گیا ہے۔ یو این آئی