منی لانڈرنگ کیس صلاح الدین کا نواسہ دلی طلب این آئی اے نے سمن جاری کیا ، فرزند پہلے ہی حراست7روزہ ریمانڈ پر

نیوز ڈیسک
نئی دہلی+سرینگر//مبینہ منی لانڈرنگ معاملے کی تحقیقات کررہی قومی تفتیشی ایجنسی ’این آئی اے ‘ شاہد یوسف کی گرفتار ی کے بعد سید صلاح الدین کے نواسے مزمل کے نام سمن جاری کرتے ہوئے اُنہیں دہلی طلب کیا ہے ۔واضح رہے کہ سید صلاح الدین کے فر زند شاہد یوسف کو چند روز قبل نئی دہلی میں این آئی اے پوچھ تاچھ کے بعد حراست میں لیا اور 7روزہ ریمانڈ بھی حاصل کی ہے ۔ قومی تفتیشی ایجنسی ’این آئی اے ‘ نے سید صلاح الدین کے فر زند کی گرفتاری کے بعد نواسے کے نام سمن جاری کی ہے ۔اس سلسلے میں میڈیا میں آئی رپورٹس کے مطابق سید صلاح الدین کے نوجوان نواسے مزمل کے نام 2روز قبل سمن جاری کر تے ہو ئے پوچھ تاچھ کےلئے نئی دہلی طلب کیا ہے ۔ ایس ایس پی بڈگام تیجندر سنگھ نے ’ڈی ٹریبیون ‘ نامی انگریزی روزنامہ کو بتایا کہ انہوں نے یہ سمن مزمل کے گھر واقع سویہ بگ بڈگام میں چھوڑ دیا ہے ۔این آئی اے نے حزب سربراہ سید صلاح الدین کے فر زند شاہد یوسف کو پہلے ہی حراست میں لے رکھا ہے ۔این آئی اے نے شاہد یوسف کی7روزہ ریمانڈ حاصل کرکھی ہے جبکہ جمعرات کو اُنکے گھر پر این آئی اے کی ایک ٹیم نے چھاپہ بھی ڈالا ۔ ’این آئی اے ‘ کی ایک ٹیم نے جمعرات کی صبح4بجکر30منٹ پر سید یوسف کی رہائش گاہ پر چھاپہ ڈالا اور یہاں کئی گھنٹوں تک اہلخانہ سے تفتیش کی ۔ قومی تفتیشی ایجنسی ’این آئی اے ‘ کی ٹیم نے چھاپہ مار کارروائی کے دوران سید شاہد یوسف کے گھر سے متعدد موبائیل فون اور ایک لیپ ٹاپ ضبط کیااور کچھ کا غذات بھی اپنی تحویل میں لی ۔وسطی کشمیر کے سویہ بگ بڈگام سے تعلق رکھنے والے شاہد یوسف متحدہ جہاد کونسل سربراہ سید صلاح الدین کے تیسرے بیٹے ہیں جو ایگریکلچر پوسٹ گریجویٹ ہیں اور محکمہ باغبانی میںاپنے ہی علاقے میںایگریکلچر ایکسٹینشن اسسٹنٹ کی حیثیت سے تعینات ہیں۔ ایس ایس پی بڈگام کے توسط سے سید شاہد یوسف تک پہنچایا گیا سمن این آئی اے کے ایس پی اجیت سنگھ نے جاری کیا تھاجس میں25اپریل سال 2011کو درج کئے گئے کیس زیر نمبرRC-06/2011/NLA/DLIکا حوالہ دیتے ہوئے شاہد یوسف کو دلی آنے کی ہدایت دی گئی تھی۔اس کیس کی تحقیقات ایس پی اجیت سنگھ ہی کررہے ہیں اور یہ کیس حزب المجاہدین کےلئے فنڈنگ کے بارے میں ہے ۔ شاہد یوسف پر الزام ہے کہ انہوں نے سال 2011 اور2014کے درمیان حوالہ چینلوں کے ذریعے سات قسطوں میں4.5لاکھ روپے کی رقم وصول کی ہے۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ جمعرات کو ہی دلی کی ایک خصوصی عدالت نے نعیم احمدخان اورظہوروٹالی کی ضمانتی درخواستیں خارج کردیں تاہم تہاڑجیل کے سُپرانٹنڈنٹ کوہدایت دی گئی ہے کہ وہ محبوس مزاحمتی لیڈرکوجیل میں معقول طبی سہولیات فراہم کریں اورسرکردہ کشمیری تاجرکوعلاج ومعالجہ کیلئے AIIMSمنتقل کیاجائے ۔